All posts by admin

”بھارتی فورسز کا قبرستان بنا دینگے “

اسلام آباد، واشنگٹن (این این آئی) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور بھارت کے وزیر اعظم نریندر مودی نے پاکستان پر زور دیا کہ وہ اپنی سرزمین دیگر ممالک پر حملوں کے لیے دہشت گردوں کے ہاتھوں استعمال نہ ہونے دے۔ امریکہ کے دارالحکومت واشنگٹن میں ملاقات کے دوران امریکی صدر اور بھارت وزیر اعظم نے دونوں ممالک کے دفاعی تعاون، دہشت گردی کےخلاف عالمی جنگ اور افغانستان میں جاری جنگ کے خلاف مل کرلڑنے کا عزم کیا۔ امریکی وائٹ ہاﺅس سے جاری ہونے والے ایک بیان میں بتایا گیا کہ ڈونلڈ ٹرمپ اور نریندر مودی نے ملاقات کے دوران پاکستان پر زور دیا گیا کہ وہ اپنی سرزمین دہشت گردوں کے ہاتھوں استعمال نہ ہونے دے اور اس کی روک تھام کے لیے ضروری اقدامات کرے۔دونوں رہنماوں نے اقوام عالم پر زور دیا کہ وہ اپنے تمام علاقائی اور سمندری تنازعات کو عالمی قوانین کے تحت پر امن طریقے سے حل کریںدوطرفہ ملاقات کے بعد وائٹ ہاوس کے باہر مشترکہ پریس کانفرنس کے دوران امریکی صدر کا کہنا تھا کہ بھارت اور امریکا دہشت گردی کی برائی اور اسے چلانے والے انتہا پسند نظریات سے متاثر ہوئے ہیں۔اس موقع پر امریکی صدر کا کہنا تھا کہ امریکا اور بھارت کے تعلقات کبھی بھی بہتر اور مضبوبط تر نہیں رہے۔انہوں نے بھارتی وزیر اعظم کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ امریکا بھارت کے ساتھ کام کرنا چاہتا ہے اور دو طرفہ شفاف تجارتی تعلقات کی تعمیر کرنا چاہتا ہے جس سے دونوں ممالک کے لوگوں کو ملازمتوں کے مواقع میسر آسکیں اور ساتھ ہی دونوں ممالک کی معیشتیں بھی مضبوط ہوں گی۔ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ اب امریکی اشیاءکی بھارتی منڈیوں تک رسائی کی رکاوٹیں ختم ہو گئیں جس کی مدد سے امریکا کا مالی خسارہ کم ہوجائے گا۔نریندر مودی نے بھارت کو امریکی کمپنیوں کےلئے بہترین منڈی قرار دیتے ہوئے کہا کہ بھارت اب امریکی سرمایہ کاروں کےلئے ایک محفوظ ملک کی حیثیت اختیار کر رہا ہے۔بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے کہاکہ امریکا بھارت کےلئے سماجی و اقتصادی تبدیلی میں اہم شراکت دار ہے۔اس موقع پر بھارتی وزیر اعظم نے کہا کہ بھارت کی ترقی کےلئے میرے نقطہ نظر اور ڈونلڈ ٹرمپ کے امریکا کو دوبارہ عظیم ملک بنانے کے نظریے کی مدد سے دونوں ممالک کے تعاون میں نئی وسعت پیدا ہوگی۔اس موقع پر امریکی صدر کا کہنا تھا کہ وہ افغانستان میں تعمیر و ترقی کے عمل میں تعاون پر بھارتی عوام کے شکر گزار ہیں۔بھارتی وزیر اعظم نے بھی امریکی صدر کو یقین دلایا کہ بھارت عالمی امن و استحکام کے حصول میں امریکا کے ساتھ قریبی تعلقات قائم رکھے گا۔ڈونلڈ ٹرمپ سے ملاقات سے قبل بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے امریکی سیکریٹری دفاع جم میٹس اور امریکی سیکریٹری اسٹیٹ ریکس ٹلرسن سے بھی ملاقات کی تھی۔امریکی محکمہ خارجہ نے حزب المجاہدین کے سپریم کمانڈر سید صلاح الدین کو خصوصی طور پر نامزد عالمی دہشت گرد قرار دیتے ہوئے ان پر پابندیاں عائد کردیں۔امریکی محکمہ خارجہ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا کہ سید صلاح الدین کو ایگزیکٹو آرڈر 13224 کے سیکشن ’ون بی‘ کے تحت عالمی دہشت گرد قرار دیا جاتا ہے جو امریکا اور اس کے شہریوں کی سلامتی کےلئے خطرہ بننے والے غیر ملکیوں پر لاگو ہوتا ہے جبکہ اس کے بعد پابندی کی زد میں آنے والے پر پابندیاں بھی عائد ہوجاتی ہیں۔پابندی کے بعد کسی امریکی کو سید صلاح الدین سے مالی لین دین کی اجازت نہیں ہوگی۔امریکی محکمہ خارجہ کے بیان میں کہا گیا کہ سید صلاح الدین نے ستمبر 2016 میں کشمیر تنازع کے کسی پرامن حل کی راہ میں رکاوٹ بننے کا عندیہ دیا تھا جبکہ انہوں نے وادی کشمیر کو بھارتی فورسز کا قبرستان بنانے کےلئے کشمیریوں کو خودکش بمبار کی تربیت دینے کی بھی دھمکی دی تھی۔ امریکہ نے کہنا ہے کہ حزب المجاہدین نے متعدد حملوں کی ذمہ داری بھی قبول کی ہے۔ پاکستان نے امریکہ اور بھارت کے درمیان اعلیٰ فوجی ٹیکنالوجی سے متعلق معاہدے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہاہے کہ بھارت کو اسلحہ اور دیگر آلات کی فراہمی جنوبی ایشیاءمیں فوجی توازن کو نقصان پہنچائےگا ¾بھارت کو طیاروں کی فراہمی سے بھارتی جارحانہ عزائم کے نظریئے کو مزید تقویت ملے گی ¾کشمیریوں کے حق خود ارادیت کےلئے جدوجہد کر نے والے افراد کو دہشتگرد قراردینا ناقابل قبول ہے ¾ بھارت نے تحریک طالبان کو پاکستان کے خلاف اعلیٰ کار کے طورپر استعمال کیا ہے ¾ خطے میں عدم استحکام میں بھارت کے کردار کو نظرانداز نہیں کیا جاسکتا ۔بدھ کو وزار ت خارجہ نے امریکہ اور بھارت کے مشترکہ بیان کے مندرجات پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس سے جنوبی ایشیاءمیں امن کے حصول کے مقاصد کو نقصان پہنچے گا ۔بیان میں کہاگیا کہ امریکہ اور بھارت کے مشترکہ بیان میں ان اہم وجوہات کی طرف توجہ نہیں دی گئی جو خطے میں عدم استحکام اورکشیدگی کا باعث بنے گی اسی لئے یہ بیان پہلے سے کشیدہ ماحول کو مزید بد تر کر یگا ۔یاد رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور بھارت کے وزیر اعظم نریندر مودی نے واشنگٹن میں ملاقات کے بعد پریس کانفرنس کے دور ان پاکستان پر زور دیا کہ وہ اپنی سرزمین دیگر ممالک پر حملوں کے لیے دہشت گردوں کے ہاتھوں استعمال نہ ہونے دے۔ دفتر خارجہ نے کہاکہ واشنگٹن میں صدر ٹرمپ اور وزیراعظم مودی کی ملاقات میں بھارت کو خطے میں ان پالیسی کے بارے میں نہیں بتایا گیا جو امن کےلئے خطرہ ہے ۔دفتر خارجہ نے کہاکہ کشمیر میں بھارت کی مسلسل انسانی حقوق کی خلاف ورزی اور بھارت میں مذہبی اقلیتوں کے حقو ق کی پامالی کے سلسلے میں بھارت کی توجہ دلانی چاہیے تھی ۔دفتر خارجہ نے کہاکہ پاکستان کشمیری عوام کی سیاسی ¾ اخلاقی اورسفارتی حمایت جاری رکھے گا اور پرامن کشمیری جدو جہد کو دہشتگردی کے ساتھ جوڑنے اوران افراد کوجو حق خود ارادیت کےلئے جدوجہد کررہے ہیں دہشتگرد قرار دینا ناقابل قبول ہے ۔بیان میں کہاگیا کہ پاکستان بھارت کےساتھ اقوام متحدہ کی سکیورٹی کونسل کی قرارداد وں کے تحت کشمیر کا مسئلہ بات چیت کے ذریعے حل کر نے کےلئے تیار ہے ۔ترجمان نے یاد دلایا کہ بھارت نے اقوام متحدہ کی قراردادوں کا کئی مرتبہ کھلم کھلا ذکر کیا ہے۔بیان میں مزید کہاگیا کہ پاکستان دہشتگردی کا نشانہ بنا ہے اور اس کی قربانیاں بے مثال ہیں دہشتگردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی طرح کسی بھی ملک کا جانی و مالی نقصان نہیںہوا ۔پاکستانی فورسز نے مختلف آپریشنز کے ذریعے دہشتگردی کے مراکز کا خاتمہ کیا ہے ¾پاکستان عالمی برادری سے توقع رکھتا ہے کہ وہ پاکستان کےساتھ دہشتگردی کے خلاف جنگ میں کھڑی رہے ۔بیان میں کہاگیا کہ یہ امر افسوس ناک ہے کہ وہ ممالک جو دہشتگردی کے خلاف دعوے کرتے ہیں وہ خود پاکستان میں حالیہ سالوں میں دہشتگردی میں ملوث رہے ہیں انڈیا نے سرحد کے اس پار تحریک طالبان کوپاکستان کے خلاف اعلیٰ کار کے طورپر استعمال کیا ہے خطے میں عدم استحکام میں بھارت کے کر دار کو نظرانداز نہیں کیا جاسکتا ۔بیان میں بھارت اور امریکہ کے درمیان اعلیٰ فوجی ٹیکنالوجی سے متعلق معاہدے پر بھی تشویش کا اظہار کیا گیا بیان میں کہاگیا کہ بھارت کو اسلحہ اور دیگر آلات کی فراہمی، جنوبی ایشیا میں فوجی توازن کو نقصان پہنچائے گا۔ یاد رہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کے واشنگٹن کے دورے کے دور ان ٹرمپ انتظامیہ نے بھارت کو دوارب ڈالر کے جاسوسی طیاروں کو فروخت کر نے کی منظوری دی ہے۔ پاکستانی دفتر خارجہ نے کہاکہ بھارت کو ان طیاروں کی فراہمی سے ان کے جارحانہ عزائم کے نظریئے کو مزید تقویت ملے گی۔

بلیک میلنگ کا انکشاف

لندن (بیورو رپورٹ) وزیراعظم نواز شریف کے داماد کیپٹن (ر) محمد صفدر نے الزام عائد کیا ہے کہ جے آئی ٹی نے انہیں بلیک میل کرنے کی کوشش کی‘ وقت آنے پر بہت سی چیزوں کو منظر عام پر لاﺅں گا ۔ انہوں نے یہ بات وزیراعظم نواز شریف کی لندن سے عید کے روز پاکستان روانگی کے موقع پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہی۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا ہے کہ ان کے ساتھ جے آئی ٹی کا رویہ بہت سخت تھا اور جے آئی ٹی کے ارکان پوچھ رہے تھے اور کہہ رہے تھے کہ فلاں کو جانتے اور فلاں سے تمہارا کیا تعلق ہے‘ ایسی باتوں سے سوالات کا آغاز کیا گیا‘ جے آئی ٹی کے ارکان نے مجھے بلیک میل کرنے کی کوشش کی کہ فلاں کو جانتے ہو تو میں نے کہا کہ میں پورے پاکستان کو جانتا ہوں اور میں نے ان سے کہا کہ جو آپ مجھ سے اگلوانا چاہتے ہیں جس طرف آپ مجھے لے کر جانا چاہتے ہیں انہوں نے سمجھا تھا کہ یہ ایک سفید پوش گھرانے کا بچہ ہے اور اس کو ہم دبائیں گے تو شاید کوئی چیز ہمیں مل جائے الحمد اﷲ میں سچا تھا اور میں سچائی پر قائم رہا۔ انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کو چاہئے تھا کہ کوئی قابل اور قانون جاننے والے افراد پر مشتمل جے آئی ٹی بنائی جاتی جہاں مجھ سے سوالات کئے جاتے رہے وہاں بھی کیمرے لگے تھے اور کہیں بھی ریکارڈنگ چل رہی تھی۔ نیلی پیلی فائلیں اٹھا اٹھا کر سوالات کئے جاتے رہے۔ چٹیں بھی آرہی تھیں۔ ان کا اس دوران ایک نماز کا بھی وقفہ ہوا اور اس وقفے میں ایک شخص مجھے ملا میں وقت کے ساتھ ساتھ کچھ چیزیں بیان کروں گا مجھے بلانے کے بعد انہیں مایوسی ہوئی ہے۔ قوم نواز شریف کے ساتھ کھڑی ہے۔ وقت آنے پر جے آئی ٹی کا سارا رویہ منظر عام پر لاﺅں گا۔ کیپٹن صفدر نے کہا کہ میں نے جے آئی ٹی ارکان سے کہا کہ کاش آپ نے مولوی تمیز الدین کی درخواست کی ایک فوٹو کاپی پڑھ کر اپنے پاس رکھ لیتے تو آپ کو پتہ چل جاتا کہ پاکستان کے پاس کہاں سازش ہوئی اور کہاں رکی ہے۔

”مریم میری آواز “ٹویٹر پر چھا گیا ،وجہ کیا بنی ؟

لاہور(آئی اےن پی)جے آئی ٹی مےں وزےر اعظم نوازشرےف کی صاحبزادی مریم نواز کی طلبی، ٹویٹر پر ‘مریم میری آواز’ ٹاپ ٹرینڈ بن گیا، مریم نواز کی حمایت میں ہزاروں پیغامات۔تفصےلات کے مطابق پہلے وزیر اعظم، پھر بیٹے اور اب بیٹی کی جے آئی ٹی میں طلبی کے بعد عوام کی بڑی تعداد مریم نواز سے اظہار یکجہتی کیلئے سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر سرگرم ہو گئی اور دیکھتے ہی دیکھتے مریم میری آواز ٹویٹر پر ٹاپ ٹرینڈ بن گیا۔ عزم عارف نامی ایک صارف نے میسج کیا، بہادر باپ کی بہادر بیٹی ۔ جان اچکزئی نے ٹویٹ کیا، مریم نواز کو جے آئی ٹی میں طلبی کا نوٹس بھیج کر شریف خاندان سے سیاسی انتقام لیا جا رہا ہے ۔ صائمہ فاروق نے مریم نواز کی وزیر اعظم کے ساتھ تصویر شیئر کی اور لکھا، وہ خاتون جو جمہوریت کی بقا کیلئے ہمیشہ اپنے باپ کے کندھے سے کندھا ملا کر کھڑی رہی۔ مائزہ حمید نے یوں رائے دی، لوگوں اور ملک کی خدمت کرنے اور معیشت، تعمیرات کو بہتر کرنے کی کیا قیمت چکائی ہے۔

کشمیر میں عید پر پابندی کیخلاف مظاہرے ،سبر ہلالی پرچم لہراتا رہا

سرینگر(این این آئی)مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج نے عید کے روزریاستی دہشت گردی جاری رکھتے ہوئے عید کے متعدد اجتماعات پر فائرنگ کرکے درجنوں کشمیریوں کو زخمی کردیا۔کشمیر میڈیا سروس کی رپورٹ کے مطابق کشمیریوں نے عیدگاہ، حیدرپورہ، سوپور، پٹان، اسلام آباد اور پلومہ کے علاقوں میں نمازِ عید کے بعد بھارت کی ریاستی دہشت گردی اور اس میں نہتے اور معصوم کشمیریوں کی ہلاکت پر مظاہروں کا آغاز کیا۔اس موقع پر مظاہرین نے پاکستانی پرچم لہرائے اور بھارت مخالف اور آزادی کے حق میں نعرے لگائے۔رپورٹ کے مطابق مظاہرین مطالبہ کررہے تھے کہ بھارتی فورسز مزید وقت ضائع کیے بغیر جموں اور کشمیر سے واپس چلیں جائیں جس پر بھارتی فورسز نے مظاہرین پر پیلٹ گنز سے فائرنگ کی جبکہ اس موقع پر نہتے کشمیریوں پر گولیاں بھی چلائی گئیں۔بھارتی فورسز کی فائرنگ سے درجنوں کشمیری زخمی ہوگئے جبکہ واقعے کے بعد پولیس اور مظاہرین میں جھڑپوں بھی ہوئیں حریت رہنما عمر عادل ڈار اور قاضی یاسر سری نگر اور اسلام آباد میں ہونے والے مظاہروں کی قیادت کررہے تھے جبکہ کشمیر کی بھارتی انتظامیہ نے حریت رہنماو¿ں سید علی گیلانی، میر واعظ عمر فاروق، محمد یاسین ملک، شبیر احمد شاہ اور دیگر کو ان کے گھروں اور دیگر کو تھانے میں نظر بند کررکھا ہے اور انھیں نماز عید کی ادائیگی کی بھی اجازت نہیں دی گئی۔ مقبوضہ کشمیرمیں بھارتی پولیس نے تحریک حریت جموں وکشمیر کے ان تین رہنماﺅں کو گرفتار کر لیا ہے جن کے گھروں پر بھارتی تحقیقاتی ادارہ این آئی اے چھاپے مار رہا تھا ۔ کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق تحریک حریت کی طرف سے جاری ایک بیان میں کہاگیا ہے کہ پولیس نے گزشتہ شام ایاز اکبر، الطاف احمد شاہ اور راجہ معراج الدین کلوال کے گھروں پر چھاپے مار کر انہیں گرفتار کرلیا ۔ پولیس نے تحریک حریت کے رہنماءپیر سیف اللہ کے گھر پر بھی چھاپہ مارا تھا تاہم وہ گھر پر موجود نہیں تھے۔تحریک حریت کے بیان میں حریت رہنماﺅں کو بلا جواز طورپر گرفتاری کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہاہے کہ انہیں گرفتاری کی کوئی وجہ نہیں بتائی گئی ہیں۔ بھارتی فوج کی جانب سے ایک فوجی افسر کی ہلاکت کے بعد شروع کئے گئے آپریشن کے دوران جھڑپوں میں 2 کشمیری نوجوان شہید ہوگئے۔تفصیلات کے مطابق 24 جون کو سری نگر کے پنتھا چوک پر ایک حملے میں بھارتی فوج کا ایک اعلیٰ افسر اور 2 اہلکار زخمی ہوگئے تھے، جس کے بعد بھارتی فوج نے علاقے میں آپریشن شروع کیا تھا۔بھارتی فوج کی جانب سے بیس گھنٹے سے بھی زائد وقت تک جاری رہنے والے آپریشن کے دوران جھڑپوں میں 2 کشمیری نوجوان شہید ہوگئے۔ مقبوضہ کشمیرمیں ہزاروں افراد نے عید الفطر کے روز بھارتی فوجیوں کے مظالم اور انکی طرف سے پید اکئے گئے خوف و ہراس کے ماحول کے خلاف بڑا احتجاجی مظاہرہ کیا ۔ مظاہرے میں خواتین اور بچوں کی بڑی تعداد بھی شامل تھی۔ کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق عید کے روز ہندوراڑہ میں بھارتی فورسز کی طرف سے کشمیریوں کے گھروں پر چھاپے توڑپھوڑ ، مکینوں اورکرکٹ کھیلنے والے نوجوانوںکو تشدد کا نشانہ بنانے کے خلاف احتجاجی ریلی نکالی گئی جس کی قیادت نام نہاد اسمبلی کے رکن انجینئر عبدالرشید نے کی ۔ انجینئر رشید نے ایک بیان میں کہاہے کہ بھارتی فوج کی راشٹریہ رائفلز کے اہلکاروںنے اسپیشل آپریشز گروپ کے اہلکاروںکے ساتھ مل کر عید کے پہلے روز Sarmaragاورملحقہ دیہات میں گھروں میں گھس کر کشمیریوںکو تشدد کا نشانہ بنایا اور توڑ پھوڑ کی جبکہ فورسز اہلکاروںنے کھیل کے قریبی گراﺅنڈ میں جاکر وہاں کرکٹ کھیلنے والے نوجوانوں پر بھی وحشیانہ تشدد کیا اور ان کے موبائیل فون چھین لئے ۔

چینل ۵ کی ٹیم کا دورہ سویٹ ہوم ،بچوں میں گھل مل گئے

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) چینل ۵ کی ٹیم نے سویٹ ہوم میں موجود بچوں کے ساتھ عید پر خصوصی گفتگو کی تاکہ ان احساس محرومی ختم ہو اور وہ خود کو تنہا نہ سمجھیں اس موقع پر بچوں سے مختلف سوالات کئے گئے۔ کچھ بچوں نے قرآن پاک کی تلاوت سنائی نیوز ایٹ 8کی ٹیم کو بچوں نے بتایا کہ وہ تعلیم میں دلچسپی لیتے ہیں۔ بیشتر بچوںنے عزم ظاہر کیا کہ وہ بڑے ہوکر ڈاکٹر انجینئر اور پائلٹ بن کر ملک کی خدمت کرنا چاہتے ہیں سویٹ ہوم کے سرپرست زمرد خان نے بتایا کہ وہ سیاست میں بھی رہا لیکن سویٹ ہوم میں بچوں کیلئے جو کچھ میں کررہا ہوں اس سے مجھے بہت مسرت ملتی ہے اور اس جیسا کوئی کام نہیں سویٹ ہوم آغاز 2009میں سوات آپریشن کے دوران ہوا تھا آج سویٹ ہوم میں چار ہزار بچوں کی پرورش ہورہی ہے۔ والدہ کی نصحیت سے محروم بچوں کوہم اس سویٹ ہومز میں کفالت کرتے ہیں اور یہ بچے اوربچیاں میرے اولاد کی طرح ہم ان بچوں کو خوراک تعلیم اور بہترین تربیت کا انتظام کرتے ہیں زمرد خان نے بتایا میں ان بچوںکو کافی وقت دیتا ہوں اور میری زندگی کا مقصد ان بچوں کی پرورش کرنا ہے میں سمجھتا ہوں خدمت خلق جیسا کوئی کام نہیں۔

”2008ءکے الیکشن فکس تھے“ سابق وزیراعظم نے بھید کھول دیا

لاہور (سیاسی رپورٹر) پاکستان کے سابق وزیراعظم اور مسلم لیگ ق کے صدر چودھری شجاعت حسین نے کہا ہے کہ نہ کوئی ن ہے نہ ق نہ کوئی پے اور نہ کوئی دوسرا دھڑا۔ پاکستان مسلم لیگ جو الیکشن کمیشن میں رجسٹرڈ ہے اس کا صدر ہوں۔ وہ عید سے اگلے روز ٹرو کے دن ٹی وی چینل۵ کے پروگرام ضیاشاہد کے ساتھ میں گفتگو کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ اگر مسلم لیگ ن کے صدر نواز شریف کے خلاف فیصلہ آیا تو ن لیگ ایک آندھی میں اڑنے والے پتوں کی طرح بکھر جائے گی اور ان کے خاندان کے چند ذاتی بہی خواہوں کے ساتھ اکثر قومی اسمبلی اور پنجاب اسمبلی میری صدارت میں بننے والی مسلم لیگ میں واپس آ جائینگے۔ پنجاب میں وزیراعلیٰ شہباز شریف کی کارکردگی کے حوالے سے چند سوالوں کے جواب میں چودھری شجاعت نے کہا کہ کیا مثبت کام کیا ہے شہباز صاحب نے صحت کے میدان میں پنجاب کے عوام سخت پریشان ہیں تعلمی اداروں میں بالخصوص ستیاناس ہوچکا ہے کسان سب سے بڑے صوبے پنجاب کے آبادی 70% فیصد بدحال ہے۔ زراعت کھوہ کھاتے میں چلی گئی لٰہذا فیصلہ خلاف آنے کی صورت میں پنجاب میں مظاہروں کا کوئی امکان موجود نہیں۔ ان سے پوچھا گیا دھرنوں کے دوران آپ عمران خان اور طاہرالقادری سے بہت ملاقاتیں کرتے رہے۔ آپ بتائیں جب عمران اور قادری نے پارلیمنٹ ہاﺅس میں قبضہ کرنے کی کوشش کی۔ وزیراعظم ہاﺅس میں گھیراﺅ کیا اور پی ٹی وی پر قبضہ کر لیا ہے تو عمران خان کا یہ کہنا کہ امپائر کی انگلی اٹھنے والی ہے کا کیا مطلب تھا جبکہ تحریک انصاف کے صدر نے یہ الزام لگا کر کہ دھرنے کے ذریعے مارشل لاءلگانے کی کوشش کی جا رہی ہے جس کی سیاستدان اجازت نہیں دے سکتے۔ چودھری شجاعت نے کہا یہ بہت لمبی بحث ہے پھر کسی وقت جواب دونگا۔ بھارتی جاسوس کے بارے میں بھی انہوں نے کہا کہ نیپال میں اغوا کئے جانے والے پاکستانی کرنل سے کلبھوشن کا تبادلہ کیا جا سکتا ہے تو ق کے صدر نے کہا مجھے اس مسئلے پر عبور نہیں اس لئے جواب نہیں دونگا۔ انہوں نے کہا کہ 2008ءکے الیکشن میں پہلے ہی فیصلہ ہو گیا تھا کہ بینظیر بھٹو وزیراعظم بنے گی اور پرویز مشرف صدر چودھری صاحب نے کہا کہ ہم بھی انہیں صدر رکھنے کو تیار تھے۔ یہ فیصلہ امریکہ میں ہواتھا اور این آر ا و کے ذریعے پیپلز پارٹی کے عہدیداروں کو ورکروں کے علاوہ بڑی تعداد میں مجرموں کو رہائی مل گئی تھی۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے بتایا کہ مجھے ایوان صدر سے فون آیا کہ آپ کی سیٹیں کم آ رہی ہیں صبر و تحمل سے برداشت کرنا میں نے کچھ پوچھنا چاہا تو صدر نے رسیور بریگیڈئر اعجاز شاہ کو دے دیا۔ جو وفاقی بیورو کے چیف تھے) جنہوں نے مجھے یہ پیغام دیا کہ آپ اپنی ہار تسلیم کریں اور مسائل نہ پیدا کریں ورنہ آپ کے لئے اچھا نہ ہوگا۔ چودھری شجاعت سوال پوچھنے کی ا س رائے سے اتفاق کیا کہ جنرل مشرف کی سب سے بڑی غلطی تھی اور اس غلطی کا خمیازہ ہمیں ہی نہیں خود جنرل پرویز مشرف کو بھگتنا پڑا۔ جب چودھری شجاعت سے یہ پوچھا گیا کہ آخر پرویز مشرف آپ سے ناراض کیوں ہوئے آپ بھی انہیں صدر رکھنا چاہتے تھے تو انہوں نے کہا امریکن دباﺅ تھا اور بے نظیر بھٹو کے حق میں فیصلہ ہو چکا تھا۔ پانامہ لیکس کے بارے میں موجود عدالتی کاروائی کے بارے میں جب چودھری شجاعت سے پوچھا گیا کہ آپ ن لیگ کے پنجاب کے صدر تھے اور برسوں جناب نواز شریف دست راس رہے۔ انہوں نے کہا بارہ سال تک ان کے ساتھ کام کیا لیکن اقتدار سے علیحدگی اور ہائی جیکنگ کیس کے بعد وہ وہ سعودی عرب چلے گئے اور دس سال سیاست نہ کرنے کا معاہدہ کر لیا تو ہمارے خیال میں پاکستان مسلم لیگ کو بچانا ضروری تھا۔ ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ آخری فیصلہ تو سپریم کورٹ ہی دے گی۔ لیکن بظاہر لگتا ہے میاں صاحب اور اہل خانہ ججوں کے سامنے کوئی صفائی نہیں دے سکے دو جج پہلے ہی ان کے خلاف فیصلہ دے چکے تین نے کہا مزید تحقیق کے لئے جے آئی ٹی قائم کی جائے۔ سپریم کورٹ کے پاس میاں صاحب کو صاف بری کرنا مشکل ہوگا۔ ان سے پوچھا گیا کہ کیا میاں صاحب کے کبوتر اڑ جائیں گے تو انہوں نے کہا کہ زیادہ تر ہمارے درخت کی شاخوں میں پناہ لیں گے۔ انہوں نے کہا کہ تاریخ میں پہلی دفعہ منتخب وزیراعظم کی مبینہ کرپشن پر فیصلہ دینا ہے۔ کرپشن کے خلاف 80 فیصد کریڈٹ عمران خان کو جاتا ہے۔ 5 فیصد شیخ رشید کو 5 فیصد جماعت اسلامی اور پیپلز پارٹی کو باقی 10 فیصد آزاد میڈیا نے تحریک یہاں تک پہنچائی۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ شیخ رشید کی عوامی مسلم لیگ ہو یا پگاڑہ صاحب کی مسلم لیگ ہم سب اندر سے ایک ہیں اور موجودہ حکمرانوں کے خلاف صف آراءہیں۔ اس سوال کے جواب میں کہ آپ کو تین سال تک وزیراعظم رہنے کا موقع ملا آپ نے کونسا ایسا کام کیا جسے آپ اپنا کارنامہ سمجھتے ہیں۔ انہوں نے کہا صرف 90 دن میں میں نے دو کام کئے جن پر آج تک اللہ کا شکر ادا کرتا ہوں۔ اول کوئی پاکستانی بیرون ملک فوت ہو جاتا تھا تو ائیر لائنز واپس وطن نہیں پہنچاتی تھیں۔ ہم نے سختی سے قانون منظور کروایا کہ جہاں کہیں دنیا میں پاکستانی فوت ہو گا تو پی آئی اے کی ذمہ داری ہو گی کہ اس میت فری وطن تک پہنچائی جائے۔ دوسرا سڑک پر ٹریفک حادثہ ہو جاتا تھا تو زخمیوں کو ہسپتال میں داخلہ نہیں ملتا تھا چونکہ قانون یہ تھا کہ پہلے پولیس میں پرچہ درج کراﺅ اس طرح کئی جانیں ضائع ہو جاتی تھیں۔ میں نے یہ پابندی ختم کروا دی جو آج تک موجود ہے اور زخمیوں کو بغیر پولیس رپورٹ کے فوراً آپریشن تھیٹر پہنچایا جاتا تھا۔

بلاول نے عید کے روز کہاں حاضری دی؟, جان کر آپ بھی فخر کرینگے

لاڑکانہ (این این آئی) پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ، سابق وزیراعلیٰ سید قائم علی شاہ، اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی، صوبائی وزرائ، نثار احمد کھوڑو، سہیل انور سیال و اراکین قومی و صوبائی اسمبلی کے ہمراہ نماز عید گڑھی خدا بخش بھٹو میں ادا کی۔ نماز عید کی ادائیگی کے بعد پاکستان کی ترقی، دہشت گرد واقعات میں شہید ہونے والے افراد اور احمد پور شرقیہ واقعہ میں جاں بحق ہونے والے افراد کے ایصال ثواب کے لیے خصوصی دعائیں مانگی گئیں۔ نماز عید کی ادائیگی کے بعد بلاول بھٹو اور وزیراعلیٰ کارکنان سے عید ملے۔ بعد ازاں بلاول بھٹو و دیگر نے شہید محترمہ بینظیر بھٹو، شہید ذوالفقار علی بھٹو و دیگر کے مزارات پر حاضری دی، فاتحہ خوانی کی اور پھولوں کی چادریں چڑھائیں۔ بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ سندھ میں جلد ہی 45ہزار نوکریاں میرٹ پر دی جائیں گی۔ نوڈیرو ہاﺅس میں کارکنوں سے ملاقات کے دوران بات چیت کرتے ہوئے بلاول بھٹو نے کہاکہ سندھ حکومت بے روزگاری ختم کرنے کے لیے عملی طور پر کام کررہی ہے، آنے والے دنوں میں 45 ہزار نوکریاں دی جائیں گی جو کہ میرٹ کی بنیاد پر ہوں گی ۔ بلاول بھٹو زرداری سے عید ملنے کے لیئے پارٹی رہنماﺅں، کارکنان، معززین اور عام شہریوں کا جوق در جوق نوڈیرو ہاﺅس آمد کا سلسلہ عید کے دوسرے اور تیسرے روز بھی جاری رہا۔ اپنے مہمانوں سے ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے پی پی پی چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ ہمیں اپنی دعاﺅں میں پارا چنار، کوئٹہ اور کراچی کے شہدا اور بہاولپور حادثے کے متاثرین کو بھی یاد رکھنا چاہئے۔ بلاول بھٹو نے پنجاب کی تنظیموں سے صوبے کے دورے کا شیڈول مانگ لیا بلاول بھٹو نے پنجاب کے تمام بڑے شہروں‘ ڈویژنل ہیڈکوارٹرز کے دوروں‘ کارکنوں اور عوامی اجتماعات سے خطاب کیلئے پیپلزپارٹی وسطی پنجاب اور جنوبی پنجاب کی قیادت سے شیڈول مانگ لیا۔

لاہور میں کھلے دودھ کی فروخت پر پابندی بارے بڑی خبر

لاہور (خصوصی رپورٹ) صوبائی دارالحکومت میں کھلے دودھ کی فروخت پر مکمل پابندی کیلئے قانون سازی کا فیصلہ کر لیا گیا ہے۔ شہر بھر کی گنجان آبادیوں اور گلی محلوں کی سطح پر ملاوٹ شدہ‘ مضر صحت جعلی دودھ کی مکمل روک تھام کیلئے متعلقہ محکمے انتہائی اقدام کیلئے حرکت میں آ گئے ہیں۔ ان محکموں نے گزشتہ کچھ عرصے کے دوران شہر میں دودھ‘ دہی کی نئی دکانوں کی بھرمار اور دودھ کے کاروبار میں حیران کن تیزی کے رجحان کو دیکھتے ہوئے سروے کروائے تھے جن کی ہوشربا رپورٹ کے مطابق گائے‘ بھینس کے اصلی دودھ کی پیداوار میں تو اضافہ نہیں ہوا تاہم بڑھتی ہوئی آبادی کی ضروریات پوری کرنے کیلئے نقلی دودھ تیار کیا جا رہا ہے جس میں یوریا ڈیٹرجنٹ‘ ویجیٹیبل فیٹ و دیگر مضر صحت اجزاءڈال کر دودھ تیار کیا جاتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ دودھ کے کاروبار میں غیرحقیقی منافع کے پیش نظر لاہور کے مہنگے علاقوں میں چمک دمک والی دکانوں کے پھیلاﺅ میں بے تحاشا اضافہ دیکھا گیا جبکہ بعض مقامات پر دکانوں کے افتتاح کے موقع پر گاہکوں کیلئے دودھ کی ایک گڑوی کے ساتھ ایک مفت کی پرکشش آفر بھی نظر آئی۔ اس حوالے سے پنچاب فوڈ اتھارٹی نے مضر صحت دودھ کے خلاف بڑے پیمانے پر کریک ڈاﺅن کا آغاز کیا اور لاہور کے داخلی راستوں پر ناکے لگا کر ہزاروں من دودھ ضائع بھی کیا گیا تاہم خاطرخواہ نتائج نہ ملنے کے باعث اب مرحلہ وار پنجاب بھر میں کھلے دودھ کی فروخت پر پابندی عائد کر دی جائے گی جس کا آغاز لاہور سے ہو گا۔ اس سلسلے میں ”پیسچرائزڈ لائ“ کے نام سے ایک مجوزہ قانون پاس کیا جائے گا جس کے تحت نجی شعبے کے تعاون سے لاہور کے تمام داخلی راستوں پر پیسچرائزیشن کے پلانٹس لگیں گے اور دوسرے شہروں سے لاہور آنے والے دودھ کے تمام کنٹینر وہاں پر خالی کئے جائیں گے۔ موقع پر ہی دودھ کا معیار چیک کر کے گوالوں کو ادائیگیاں کی جائیں گی‘ بعدازاں اس دودھ کو پیسچرائزاڈ اور سٹینڈرڈائز کر کے چھوٹی چھوٹی تھیلیوں میں منتقل کر دیا جائے گا جہاں سے لاہور کے دس ہزار دکاندار اپنی ضرورت کے مطابق دودھ اٹھا کر شہر میں فروخت کر سکیں گے۔

خاتون ڈی ایس پی کے گن مین بارے شرمناک خبر

لاہور (خصوصی رپورٹ) شیراکوٹ کے علاقہ میں عید کے روز خاتون ڈی ایس پی سکیورٹی کا گن مین زہریلی شراب پینے کے باعث ہلاک ہو گیا۔ پولیس کے مطابق غوثیہ کالونی کا رہائشی 34سالہ سجاد محکمہ پولیس میں ملازم اور لاہور کی ایک خاتون ڈی ایس پی سکیورٹی کا گن مین تھا۔ عید کے روز اپنے گھر کے ساتھ دوستوں کے ہمراہ شراب پی رہے تھے کہ اچانک حالت خراب ہو گئی۔ اسے بیہوشی کی حالت میں ہسپتال لے جایا گیا۔ وہ ہسپتال پہنچتے ہی دم توڑ ہو گیا۔ ڈاکٹروں کے مطابق پولیس کانسٹیبل کی موت زہریلی شراب پینے کی باعث واقع ہوئی ہے۔ پولیس نے نعش پوسٹمارٹم کے بعد ورثاءکے حوالے کردی ہے۔

چودھری ظہور الٰہی مخلص انسان دوست شخصیت، میں نے پچاسوں طلبا کو ان سے ماہوار وظیفہ لگوایا

لاہور (سیاسی ڈیسک) سوال و جواب کی نشست سے پہلے خبریں اور چینل ۵ کے ضیاشاہد نے کہا چودھری ظہور الٰہی خاندان سے میرے تعلقات بہت پرانے ہیں۔ اس وقت یہ دو نئی کوٹھیاں نہیں بنیں تھیں اور چودھری ظہور پرانی کوٹھی میں تھے اس وقت پورا ملک دو حصوں میں منقسم تھا۔ بھٹو کے حمایتی اور بھٹو کے مخالف۔ چودھری ظہور الٰہی پہلی صف کے سیاستدان تھے انہوں نے جیلیں بھی کاٹیں مقدمے بھی بھگتے مگر آخر وقت تک ثابت قدم رہے حتی کہ پراسرار فائرنگ کا نشانہ بنے میں سٹوڈنٹ لیڈر حیثیت سے ان سے ملا وہ بڑی عزت اور پرانی وضعداری کے سبب اپنا داماد قرار دیتے تھے کیونکہ میری بیوی کے والدین کچہری روڈ پر ظہور پیلس کے قریب ہی رہتے تھے اور چودھری صاحب کی بیٹیاں ان کے ساتھ ڈگری کالج برائے خواتین ان کے ساتھ بڑھتی تھیں ضیاشاہد نے کہا کہ ان کے ساتھ سیاسی اختلافات کے باوجود اتنا مخلص اور انسان دوست نہیں دیکھا۔ میں نے پچاس ساٹھ طالب علموں کے نام انہیں وقتاً فوقتاً دئیے وہ اپنے پی اے کو چٹ پر دستخط کر کے تھما دیتے اور سال یا دو دوسال کے لئے ہر ماہ طالب علم کو وظیفہ کی رقم ملنے لگتی۔

جے آئی ٹی کو دھمکیاں, اب ایسا ہوا تو کیا ہوگا؟, کپتان کا دبنگ اعلان

اسلام آباد (نامہ نگار خصوصی)پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ نواز شریف کے خلاف کریمنل انوسٹیگیشن ہو رہی ہے اور وہ کہہ رہے ہیں کہ جے آئی ٹی نے میرے سوالوں کا جواب نہیں دیا ‘ وزیر اعظم نے لندن پریس کانفرنس میں جے آئی ٹی کے خلاف بات کی ‘ (ن) لیگ والے کہتے ہیں کہ ان کیخلاف فیصلہ آیا تو قوم نہیں مانے گی‘ جے آئی ٹی کو ڈرانے یا دھمکانے کی کوشش کی گئی تو چپ نہیں بیٹھوں گا ‘ اگر انہوں نے فیصلہ خلاف آنے پر کچھ کرنے کی کوشش کی تو ایک کال دوں گا قوم تیار بیٹھی ہے ‘ سارا پاکستان باہر نکلنے کیلئے تیار ہے ‘ اگر مریم نواز جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہو رہی ہے تو یہ نواز شریف کا قصور ہے ‘ جے آئی ٹی کے آنے والے فیصلے کی قوم کو پہلے ہی مبارکباد دیتا ہوں‘ نیا پاکستان پل اور سڑکیں بنانے سے نہیں ملک میں انصاف کا نظام آنے سے بنے گا‘مسلمانوں کو لڑانے کیلئے بین الاقوامی سازش ہو رہی ہے ۔ بدھ کو میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ جو حادثے عید سے پہلے ہوئے ہر جگہ پاکستانیوں کو تکلیف ہوئی۔ بہاولپور کا حادثہ بہت افسوس ناک تھا۔ کوئٹہ اور پارا چنار کے واقعہ سے ملک کو جھٹکا لگا۔ ہم سب کو تیار ہوجانا چاہیے ۔ بین الاقوامی سازش ہو رہی ہے۔ شیعہ اور سنی کو لڑایاجائے گا یہاں پہلے عراق میں لڑائی شروع ہوئی شیعہ اور سنی کو پاکستان کو اس لڑائی کو روکنے میں کردار ادا کرنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف کو کوئٹہ اور پارا چنار بھی جانا چاہیے تھا ۔ چھوٹے صوبوں میں احساس محرومی ہے۔ وزیر اعظم کی ذمہ داری ہے۔ پرویز الہٰی کے دور میں ہسپتال ایسے ہی پڑے ہوئے ہیں۔ اتنے بڑے پنجاب میں برن سینٹر نہیں ہے۔ 21 سال شریف برادران نے پنجاب پر حکومت کی ہے۔ حالات دیکھیں ہسپتالوں ‘ یونیورسٹیوں اور سکولوں کے یہ پیسہ کدھر خرچ کر رہے ہیں۔ میگا پروجیکٹ سے پہلے لوگوں کی بنیادی ضروریات پوری کریں۔ عمران خان نے کہا کہ کبھی سنا ہے مودی باہر لوگوں کو لے کرجا رہاہے اوبر سیریں کر رہا ہے۔ نواز شریف کا بیرون ملک دوروں کا آیک دن کا خرچ 27 لاکھ روپے ہے۔ انہوں نے جے آئی ٹی اور سپریم کورٹ کے خلاف باتیں کی ہیں۔ نواز شریف کے خلاف کریمنل انوسٹی گیشن ہو رہی ہے اور وہ کہہ رہا ہے کہ میرے سوالوں کا جواب نہیں دیا۔ نواز شریف کے خلا ف منی لانڈرنگ کا الزام ہے۔ سالانہ 10 ارب ڈالر کی منی لانڈرنگ ہو رہی ہے۔ و زیر اعظم نے لندن پریس کانفرنس میں جے آئی ٹی کے خلاف بات کی ۔ عمران خان نے کہا کہ یہ کہتے ہیں کہ ان کے خلاف فیصلہ آیا تو قوم نہیں مانے گی۔ رانا ثناءاللہ نے بھی کہا کہ قوم نہیں مانے گی۔ جے آئیٹی کو ڈرانے یا دھمکانے کی کوشش کی گئی تو چپ نہیں بیٹھوں گا۔ اگر آپ کے خلاف فیصلہ آیا اور آپ نے کچھ کرنے کی کوشش کی تو ایک کال دوں گا قوم تیار بیٹھی ہے سارا پاکستان باہر نکلنے کیلئے تیار ہے۔ لوگوں کو فیصلے کا انتظار ہے۔ نواز شریف کی وجہ سے مریم نواز کو پیش ہونا پڑ رہا ہے اگر مریم نواز جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہو رہی ہیں تو یہ نواز شریف کا قصور ہے ۔ نواز شریف کے پاس کوئی جواب نہیں اس لئے دباﺅ ڈالا جا رہاہے۔ جب پہلی دفعہ طاقتور قانون کے نیچے آیا گا تو نیا پاکستان بنے گا۔ نیا پاکستان پل اور سڑکیں بنانے سے نہیں ملک میں انصاف کا نظام آنے سے بنے گا۔ عمرن خان نے کہا کہ میگا پروجیکٹس کمیشن بنانے کے لئے بنائے جا رہے ہیں ۔ جے آئی ٹی کے آنے والے فیصلے کی قوم کو پہلے ہی مبارکباد دیتا ہوں۔ اشتہاروں میں بجلی پیدا وہ رہی ہے حقیقت میں نہیں۔ انہوں نے کہا کہ شریف خاندان نے پہلے جو ثبوت دئیے اس میں کچھ نہیں تھا ۔ میرے تمام دستاویزات سپریم کورٹ میں رکھے ہیں۔ عمران خان نے کہا کہ لندن فلیٹس کا منی ٹریل ثابت نہیں کیا۔ طلاق کو 13 سال ہو گئے ہیں اس کے باوجود ساری منی ٹریل ظاہر کی۔ انہوں نے کہا کہ یہ صرف اداروں کو ڈس کریڈٹ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ کیا آپ صرف پنجاب کے وزیر اعظم ہیں؟۔ یہ جے آئی ٹی کے قیام کو اپنی فتح کہہ رہے تھے آج یہ جے آئی ٹی کو متنازع بنا رہے ہیں۔ شہباز شریف جے آئی ٹی بننے پر وزیر اعظم کو مٹھائی کھلا رہا تھا ۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں فرقہ وارانہ فسادات کرانے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ عمران خان کی زیرصدارت پی ٹی آئی رہنماو¿ںکے اجلاس مےں پاناما لیکس کے ممکنہ فیصلے کے خدوخال پر تبادلہ خیال کیا گیا ترجمان پی ٹی آئی کے مطابق عمران خان کی زیرصدارت پی ٹی آئی رہنماو¿ں کا اجلاس اسلام آباد مےں ہوا اجلاس میں کوئٹہ،کراچی،پارا چنار میں دہشتگردی کے شکار شہدا اور احمد پور شرقیہ میں جاں بحق افراد کیلیے بھی فاتحہ خوانی کی گئی ۔اجلاس مےں وزیر اعظم کی لندن میں کی گئی پریس کانفرنس کے مندرجات کا جائزہ لیا گیا رہنماو¿ںنے پاناما لیکس پرجے آئی ٹی کی تحقیقات کے حتمی مرحلے پر تبادلہ خیال کیااور پاناما لیکس کے ممکنہ فیصلے کے خدوخال پربھی تفصیلی گفتگوکی گئی۔

ریما کی شوہر کے ساتھ پہلی بار کسی ٹی وی شو میں شرکت

لاہور (شوبز ڈیسک) فلمسٹار ریما اور انکے شوہر ڈاکٹر طارق شہاب نے پہلی مرتبہ اکٹھے کسی ٹی وی چینل کے مارننگ شو میں شرکت کی ۔ اس موقع پر ریما کا کہنا تھا کہ گھر عورت کی محبت سے بنتا ہے ، عورت چاہے تو اپنے گھر کو جنت بنا سکتی ہے ، بیوی اچھی ہونے کے ساتھ شوہر کا اچھا ہونا بھی ضروری ہے تب ہی کامیاب ازدواجی زندگی ممکن ہو سکتی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ میرے شوہر میرے ساتھ بھرپور تعاون کرتے ہیں اور مجھے حقیقت میں میرا آئیڈیل ہی ملا ہے جس پر میں اپنے خدا کا جتنا بھی شکر ادا کروں وہ کم ہے ۔ ریما نے بتایا کہ میرے شوہر کو لمبے بال پسند ہیں اور اسی وجہ سے میں نے اپنے بالوں کو لمبا کر رکھا ہے ۔ ہفتہ اور اتوار ہم دونوں میاں بیوی اکٹھے مناتے ہیں ، شاپنگ کے لئے بھی اکٹھے ہی جاتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ فلموں میں کام کروں یا نہ کروں مگر میرے پرستاروں کی محبت آج بھی ہے ۔اس موقع پر ریما کے شوہر ڈاکٹر طارق شہاب نے کہا کہ ریما کی شخصیت اتنی اچھی ہے کہ مجھے اس سے زیادہ اچھی بیوی مل ہی نہیں سکتی تھی ۔ مجھے ریما میک اپ کے بغیر بھی بہت خوبصورت لگتی ہیں اور اس کو گھر کی سجاوٹ بہت پسند ہے ، شادی کے بعد انہوں نے گھر کو جس طرح سے سجایا وہ قابل تعریف ہے ۔ انہوں نے کہا کہ مجھے ریما کی کوئی عادت بری نہیں لگتی البتہ اگر کہیں پارٹی میں جانا ہو تو ریما میک اپ میں دیر کر دے تو تھوڑی سی ناگواری ضرور ہوتی ہے کیونکہ میں وقت کا بہت پابند ہوں ۔ انہوں نے بتایا کہ ریما شادی سے پہلے چائے نہیں پیتی تھی مگر میں نے اب انہیں چائے پینے کی عادت بھی ڈال دی ہے ۔میں نے شادی کے بعد ایک بھی فلم نہیں دیکھی ۔